Raza e Muhammad
رضائے محمد ﷺ پر آپ کو خوش آمدید



 
HomeGalleryFAQUsergroupsRegisterLog in
www.kanzuliman.biz.nf
Raza e Muhammad

Hijri Date

Latest topics
» نماز کے اوقات (سوفٹ وئیر)
Wed 14 Aug 2013 - 4:43 by arshad ullah

» بے مثل بشریت
Tue 12 Feb 2013 - 6:53 by Administrator

» Gucci handbags outlet online
Thu 17 Jan 2013 - 2:19 by cangliang

» hermes Birkin 30
Thu 17 Jan 2013 - 2:18 by cangliang

» CHRISTIAN LOUBOUTIN EVENING
Sun 13 Jan 2013 - 6:06 by cangliang

» Cheap Christian Louboutin Flat
Sun 13 Jan 2013 - 6:05 by cangliang

» fashion CHRISTIAN LOUBOUTIN shoes online
Sun 13 Jan 2013 - 6:05 by cangliang

» Christian Louboutin Evening Shoes
Wed 9 Jan 2013 - 5:36 by cangliang

» CHRISTIAN LOUBOUTIN EVENING
Wed 9 Jan 2013 - 5:35 by cangliang

Search
 
 

Display results as :
 
Rechercher Advanced Search
Flag Counter

Share | 
 

 ماہِ ربیع الاوّل میں وقوع پذیر ہونے والے اہم تاریخی واقعات

Go down 
AuthorMessage
Administrator
Admin
Admin
avatar

Posts : 1220
Join date : 23.02.2009
Age : 38
Location : Rawalpindi

PostSubject: ماہِ ربیع الاوّل میں وقوع پذیر ہونے والے اہم تاریخی واقعات   Tue 16 Feb 2010 - 6:16

ماہِ ربیع الاوّل میں وقوع پذیر ہونے والے اہم تاریخی واقعات




٭ولادت رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم ۔۔۔۔۔۔ ١٢ ربیع الاول٥٧١ ء
٭سرکار صلی اللہ علیہ وسلم سفر مدینہ کیلئے غار ثور سے باہر تشریف لائے مع یارِ غار رضی اللہ تعالی عنہ ۔۔۔۔۔۔یکم ربیع الاول قبل ہجری
٭ مدینہ منورہ تشریف آوری اور قیام حضرت کلثوم ابن ہدم کے مکان میں، بمقام قبا ء مدینہ منورہ ۔۔۔۔۔۔بروز پیر٨ یا ١٢ ربیع الاول یکم ہجری
٭مسجد ''قبا ''کی بنیاد محلہ بنی سالم،۔۔۔۔۔۔یکم ہجری
٭اونٹنی حضرت ابو ایوب انصاری رضی اللہ تعالی عنہ کے مکان پر بیٹھی جہاں آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے سات ماہ قیام فرمایا۔۔۔۔۔۔یکم ہجری
٭اذان کی ابتدا(نماز کیلئے اعلان کرنے کے انداز کی تجاویز مختلف صحابہ نے پیش کیں ، حضرت عمر فاروق اعظم رضی اللہ عنہ، نے خواب میں اذان کے کلمات سُنے اور سیکھے اور پھر حضور علیہ الصلوٰۃ والسلام کو اپنا خواب بیان فرمایا، اس اثناء میں بذریعہ وحی اذان کے یہی کلمات قلب مصطفی صلی اللہ علیہ وسلم پر القاء ہوئے۔۔۔۔۔۔یکم ہجری
٭غزوہ بنی نضیر ۔۔۔۔۔۔٤ھ
٭غزوہ دومۃ الجندل(نصرانی مشرکین لڑے بغیر فرار ہوگئے) ۔۔۔۔۔۔٥ھ
٭مختلف ممالک اور ریاستوں کے فرمانرواؤں کو تبلیغی خطوط روانہ کئے گئے ۔۔۔۔۔۔٧ ھ
٭قبائلِ تہامہ اسلام لائے۔۔۔۔۔۔٨ھ
٭سریہ اُسامہ بن زید روانگی اور توقف۔۔۔۔۔۔١١ھ
٭خلافت ابو بکر رضی اللہ تعالی عنہ ۔۔۔۔۔۔١١ھ
٭قتل اسود بن کعب عنسی کذّاب۔۔۔۔۔۔١١ھ
٭(وصال) حضور علیہ الصلوٰۃ والسلام ۔۔۔۔۔۔١٢ ربیع الاول ١١ھ بروز پیر، ٧ یا ٨ جون ٦٣٢ئ
٭فتح عراق ۔۔۔۔۔۔١٢ ھ
٭ فرارطلیحہ اسدی کذاب۔۔۔۔۔۔١٢ ھ
٭فتح دمشق۔۔۔۔۔۔١٤ھ
٭وصال معاذ بن جبل رضی اللہ تعالی عنہ ۔۔۔۔۔۔١٨ھ
٭وفات ام المؤمنین زینب بنتِ جحش رضی اللہ تعالیٰ عنہا۔۔۔۔۔۔٢٠ھ
٭وفات ابو سفیان رضی اللہ تعالی عنہ ۔۔۔۔۔۔٣١ھ
٭وفات حضرت سلمان فارسی رضی اللہ تعالی عنہ ۔۔۔۔۔۔٣٦ھ
٭تکمیل مدتِ ''خلافت علیٰ منہاج النبوۃ''امام حسن رضی اللہ تعالی عنہ کی خلافت سے دستبرداری اور حضرت امیر معاویہ رضی اللہ تعالی عنہ کی حکومت کا قیام۔۔۔۔۔۔٤١ھ
٭تکمیل فتح کابل۔۔۔۔۔۔٤٤ھ
٭شہادت حضرت امام حسن رضی اللہ تعالی عنہ ۔۔۔۔۔۔٤٩ھ
٭وفات سعید بن زید (عشرہ مبشرہ)ص ۔۔۔۔۔۔٥١ھ
٭بغاوت مختار ثقفی۔۔۔۔۔۔٦٣ھ
٭یزید انتہائی تکلیف کے عالم میں مرگیا۔۔۔۔۔۔٦٤ھ
٭وفات ابی سعید الخدری رضی اللہ تعالی عنہ ۔۔۔۔۔۔٧٤ھ
٭عراق میں بغاوت۔۔۔۔۔۔٧٦ھ
٭وفات قاضی شریح۔۔۔۔۔۔٧٨ھ
٭شہر واسط کی تعمیر۔۔۔۔۔۔٨٢ھ
٭وفات قاضی مدینہ طلحہ الزہری۔۔۔۔۔۔٩٧ھ
٭وصال تابعی فقیہہ حضرت عطا بن یسار۔۔۔۔۔۔١٠٣ھ
٭وفات جریر ۔۔۔۔۔۔ ١٠٥ھ
٭جنگ موقان(بنو امیہ ہشام بن عبدالملک بن مروان کے دور حکومت میں لڑی گئی) ۔۔۔۔۔۔١٠٨ھ
٭وفات عمرو بن شعیب السہمی ۔۔۔۔۔۔ ١١٨ھ
٭بسطام اللیثی کی بغاوت۔۔۔۔۔۔١٢٨ھ
٭معتزلہ فرقہ کے بانی واصل بن عطاء کی موت۔۔۔۔۔۔١٣١ھ
٭وفات سلمہ بن دینار الاعرج۔۔۔۔۔۔١٤٠ھ
٭وفات خالد بن الخداء ۔۔۔۔۔۔ ١٤٢ھ
٭فتنہ محمرہ و عبدالقہار۔۔۔۔۔۔١٦٢ھ
٭عباسی فرمانروا مہدی نے زندیقیوں کے خلاف مہم شروع کی ۔۔۔۔۔۔١٦٣ھ
٭ہارون رشید کی فاتحانہ یلغار(زندیقیوں کے خلاف)۔۔۔۔۔۔١٦٥ھ
٭مہدی نے مسجد حرام کی توسیع و تعمیر کا کام کیا ۔۔۔۔۔۔١٦٦ھ/١٦٧ھ
٭وفات عباسی فرمانروا ابو محمد موسیٰ بن المہدی الملقبہ ہادی۔۔۔۔۔۔١٧٠ھ
٭تخت نشینی ابو جعفر ہارون الرشید بن مہدی بن منصور ۔۔۔۔۔۔١٧٠ھ
٭مملکت روم پر یلغار ۔۔۔۔۔۔ربیع الاول تا شعبان١٧٠ھ
٭فتح ارض روم ہارون رشید کے زمانے میں ۔۔۔۔۔۔١٧٦ھ
٭وفات القاضی شریک الکوفی۔۔۔۔۔۔١٧٧ھ
٭ترک خاقان کے مظالم۔۔۔۔۔۔١٨٣ھ
٭وفات ابراہیم الاسلمی الفقیہ۔۔۔۔۔۔١٨٤ھ
٭آل برامکہ کا قلع قمع ہارون رشید نے کیا ۔۔۔۔۔۔١٨٧ھ
٭قتل فضل الوزیر۔۔۔۔۔۔٢٠٢ھ
٭مامون الرشید نے بوران بنت حسین ابن سہل سے شادی کی اور اس شادی پر بے انتہا دولت خرچ کی ایک ماہ تک شادی کا جشن منایا گیا۔۔۔۔۔۔٢١٠ھ
٭وفات معروف شاعر ابو العتاہیہ اللغوی۔۔۔۔۔۔٢١١ھ
٭وفات حافظ معاویہ الازدی۔۔۔۔۔۔٢١٤ھ
٭شہادت محمد بن نوح العجلی۔۔۔۔۔۔٢١٨ھ
٭وفات معروف تابعی بزرگ امام الاولیا حضرت محمد بشر حافی قدس سرہ، ۔۔۔۔۔۔٢٢٧ھ
٭وفات المعتصم عباسی و خلافت الواثق باللہ۔۔۔۔۔۔٢٢٧ھ/٨٤٢ء
٭وفات حافظ ابو جعفر الجعفی۔۔۔۔۔۔٢٢٩ھ
٭وفات امیر عبداللہ بن ظاہر ۔۔۔۔۔۔٢٣٠ھ
٭دمشق میں شدید زلزلہ متعدد جانوں کا اتلاف اور عمارات کا انہدام۔۔۔۔۔۔٢٣٣ھ
٭وفات ماہر علم الانساب مصعب بن عبداللہ الزبیری المالکی قدس سرہ،۔۔۔۔۔۔٢٣٦ھ
٭وفات ابو ثورالکلبی۔۔۔۔۔۔٢٤٠ھ
٭وفات تیسری صدی کے مجدد، پیکر استقامت و جرأت امام اہلسنت حضرت احمد بن حنبل علیہ الرحمہ۔۔۔۔۔۔٢٤١ھ
٭ ایران میں زلزلہ و تباہی۔۔۔۔۔۔٢٤٢ھ
٭شہادت حضرت سیدنا امام حسن عسکری قدس سرہ، (آئمہ اہلِ بیت میں گیارہویں امام)۔۔۔۔۔۔٢٦٠ھ
٭وفات وزیر عباسی مملکت عبید اللہ بن خاقان۔۔۔۔۔۔٢٦٣ھ
٭وفات ابراہیم المزنی۔۔۔۔۔۔٦٦٤ھ
٭سلطنت عباسیہ کے بعض علاقوں پر زنگیوں کا قبضہ۔۔۔۔۔۔٢٦٧ھ
٭وفات احمد بن سیار مروزی ۔۔۔۔۔۔ ٢٦٨ھ
٭وفات بکر بن سہل الدمیاطی۔۔۔۔۔۔٢٨٩ھ
٭قرامطہ اور فاطمیہ کے مظالم۔۔۔۔۔۔٢٩٠ھ
٭وفات ابو الحسن بن کسیان النحوی ۔۔۔۔۔۔٢٩٩ھ
٭عبیداللہ المہدی کا مصر پر حملہ اور ناکامی ۔۔۔۔۔۔ ٣٠٢ھ
٭وفات ابو بکر الخلال۔۔۔۔۔۔٣١١ھ
٭رومیوں سے جنگ۔۔۔۔۔۔٣١٥ھ
٭وفات عبید اللہ المہدی۔۔۔۔۔۔٣٢٢ھ
٭وفات الراضی باللہ و خلافت ابراہیم المتقی باللہ العباسی۔۔۔۔۔۔٣٢٩ھ
٭وفات ابو علی الکتامی القرطبی۔۔۔۔۔۔٣٣١ھ
٭وفات ابن ولاد النحوی۔۔۔۔۔۔٣٣٢ھ
٭وفات ابن درستویہ الفارسی۔۔۔۔۔۔٣٤٧ھ
٭وفات فقیہ حسان الاموی۔۔۔۔۔۔٣٤٩ھ
٭بغداد میں معزالدولہ کے مظالم۔۔۔۔۔۔٣٥١ھ
٭وفات ابو القاسم خالد القرطبی۔۔۔۔۔۔٣٥٢ھ
٭قتل معزالدولہ ابن بویہ الدیلمی۔۔۔۔۔۔٣٥٦ھ
٭وفات ابو علی الحسن بن الخضرا۔۔۔۔۔۔٣٦١ھ
٭وفات ابو اسحق بن رجاء ۔۔۔۔۔۔٣٦٤ھ
٭وفات ابو بکر ابن القوطیہ۔۔۔۔۔۔٣٦٧ھ
٭فوجی انقلاب بغداد۔۔۔۔۔۔٣٧٦ھ
٭وفات ابو علی الفارسی۔۔۔۔۔۔٣٧٧ھ
٭وفات عباسی وزیر جعفر ابن الفرات۔۔۔۔۔۔٣٩١ھ
٭وفات ابوالحسن الخفاف۔۔۔۔۔۔٣٩٥ھ
٭وفات ابو سعد بن الاسماعیلی ۔۔۔۔۔۔٣٩٦ھ
٭فاطمینِ مصر نے کینسہ قما مہ مسمار کردیا۔۔۔۔۔۔٣٩٨ھ
٭معزولی اموی حکمران محمد المہدی و خلافت المستعین الاموی اندلس میں۔۔۔۔۔۔٤٠٠ھ
٭الحاکم الفاطمی نے بے پردہ عورتوں کو قتل کرایا، اور دریا میں ڈبو دیا۔۔۔۔۔۔٤٠٥ھ
٭وفات ابو بکر فورک۔۔۔۔۔۔٤٠٦ھ
٭قتل فخر الملک دیلمی ۔۔۔۔۔۔٤٠٧ھ
٭قادر با اللہ العباسی نے محمود غزنوی کو خلعت بھجوائی۔۔۔۔۔۔٤٠٨ھ
٭سلطان محمود غزنوی نے خیر سگالی کا پیغام اپنے قاصد کے ذریعے قادر باللہ کو بھجوایا۔۔۔۔۔۔٤١٠ھ
٭اندلس میں ہشام ثالث کی خلافت۔۔۔۔۔۔٤١٨ھ
٭وفات ابو الحسن البزار۔۔۔۔۔۔٤١٩ھ
٭اندلس میں طواف الملوکی۔۔۔۔۔۔٤٢٢ھ
٭بغداد میں انتشار اور سخت بد امنی قائم بامراللہ کے دور میں۔۔۔۔۔۔٤٢٤ھ
٭وفات معروف مفسر امام القرطبی علیہ الرحمۃ۔۔۔۔۔۔٤٢٩ھ
٭ وفات معروف محدث ابو بکر الاصبہانی علیہ الرحمۃ ۔۔۔۔۔۔ ٤٣٠ھ
٭وفات عبداللہ بن عبدان الہمدانی۔۔۔۔۔۔٤٣٣ھ
٭ وفات ابو محمدالہمدانی۔۔۔۔۔۔٤٣٤ھ
٭وفات الشریف المرتضیٰ۔۔۔۔۔۔٤٣٦ھ
٭وفات ابو طالب بن البقال۔۔۔۔۔۔٤٤٠ھ
٭عراق میں شدید زلزلہ سے تباہی ۔۔۔۔۔۔٤٤٤ھ
٭وفات ابو طاہر الکاتب ۔۔۔۔۔۔ ٤٤٥ھ
٭وفات ابو یعلی القزوینی۔۔۔۔۔۔ ٤٤٦ھ
٭وفات ابو المعلاء المعری۔۔۔۔۔۔٤٤٩ھ
٭وفات معروف فقیہہ مصنف ''الاحکام السلطانیہ'' امام ابو الحسن علی بن محمد ماوردی ۔۔۔۔۔۔ ٤٥٠ھ
٭وفات ابو عثمان نیشاپوری۔۔۔۔۔۔٤٥٧ھ
٭وفات معروف محدث و مؤرخ ابو بکر احمد بن علی بن ثابت الخطیب بغدادی قدس سرہ، (مؤلف تاریخ بغداد) ۔۔۔۔۔۔٤٦٣ھ
٭حکومت ملک شاہ سلجوقی۔۔۔۔۔۔٤٦٥ھ
٭وفات ابو عمر بن الخداء الاندلسی۔۔۔۔۔۔٤٦٧ھ
٭وفات البیاضی الشاعر۔۔۔۔۔۔٤٦٨ھ
٭وفات ابو الحسن بن ابی الجدید السلمی۔۔۔۔۔۔٤٦٩ھ
٭وفات ابو جعفر بن ابی موسیٰ الفقیہ۔۔۔۔۔۔٤٧٠ھ
٭وفات ابو الولید سلیمان البابی۔۔۔۔۔۔٤٧٤ھ
٭وفات عبدالرحمن النابتی۔۔۔۔۔۔٤٧٥ھ
٭وفات ابو طاہر الانباری۔۔۔۔۔۔٤٧٦ھ
٭وفات امام الحرمین حضرت ابو المعالی عبدالملک الجوینی علیہ الرحمۃ(معاون مجدد پانچویں صدی) ۔۔۔۔۔۔ ٤٦٨ھ /٤٧٨ھ
٭وفات عبید اللہ بن نصر الحجازی۔۔۔۔۔۔٤٨٠ھ
٭وفات ابو بکر بن خلف الشیرازی ۔۔۔۔۔۔ ٤٨٧ھ
٭پانچویں صدی کے مجدد امام غزالی علیہ الرحمۃ نے مدرسہ نظامیہ بغداد سے استعفیٰ دے دیا(عباسی دور المستظہر باللہ۔۔۔۔۔۔٤٨٨ھ
٭وفات ابو البرکات الدباس۔۔۔۔۔۔٤٩٩ھ
٭وفات ابو الحسین الخشاب۔۔۔۔۔۔٥٠٤ھ
٭وفات ابو سعد المعمر البقال۔۔۔۔۔۔٥٠٦ھ
٭وفات محمد بن طاہر القیسرانی۔۔۔۔۔۔٥٠٧ھ
٭والی ''مراغہ'' احمد بک کو فرقہ اسمٰعیلیہ باطنیہ کے ایک فرد نے قتل کردیا۔۔۔۔۔۔٥٠٨ھ
٭قتل وزیر الطغرائی ابو اسمٰعیل الحسین بن علی بن محمد (خالق قصیدہ ''لامیۃ العجم'')۔۔۔۔۔۔٥١٤ھ
٭وفات ابن الطیوری۔۔۔۔۔۔٥١٧ھ
٭وفات ابو اسحق الغزی الشاعر۔۔۔۔۔۔٥٢٤ھ
٭وفات ابن الحاج الفقیہ القرطبی۔۔۔۔۔۔٥٢٩ھ
٭وفات ابو عبداللہ بن النبائ۔۔۔۔۔۔٥٣١ھ
٭وفات قاضی المنتخب الدمشقی۔۔۔۔۔۔٥٣٤ھ
٭وفات ابو نصر الفتح بن محمد بن الخاقان۔۔۔۔۔۔٥٣٥ھ
٭وفات ابو البدر الکرخی ۔۔۔۔۔۔٥٣٩ھ
٭وفات حافظ ابو سعد البغدادی۔۔۔۔۔۔٥٤٠ھ
٭وفات امام ابو محمد سلط الخیام۔۔۔۔۔۔٥٤١ھ
٭فرنگیوں کا دمشق پر حملہ نور الدین زنگی نے پسپا کردیا۔۔۔۔۔۔٥٤٣ھ
٭وفات القاضی عیاض بن موسیٰ بن عیاض مالکی (معروف محدث و مصنف'' شفاء شریف '')۔۔۔۔۔۔٥٤٤ھ
٭علاؤ الدین حسین جہانسوزنے شہر غزنی کو نذر آتش کردیا ۔۔۔۔۔۔٥٤٥ھ
٭وفات سلطان سنجر بن ملک شاہ سلجوقی ۔۔۔۔۔۔٥٥٢ھ
٭ترکمانوں نے اسمٰعیلیوں پر فتح حاصل کی ۔۔۔۔۔۔٥٥٣ھ
٭وفات المقتضی عباسی اور مسند اقتدار المستنجد عباسی کے حوالے ۔۔۔۔۔۔٥٥٥ھ
٭وفات عبدالکریم السمعانی۔۔۔۔۔۔٥٦٢ھ
٭وفات ابو بکر المتونی ۔۔۔۔۔۔ ٥٧٥ھ
٭خواجہ خواجگان حضرت خواجہ غریب نواز قدس سرہ، کی ہدایت پر سلطان شہاب الدین غوری نے ہند کے راجہ پرتھوی راج سے جنگ کی اور فتح حاصل کی۔۔۔۔۔۔٥٨٧ھ
٭وفات علامہ رضی الدین القزوینی۔۔۔۔۔۔ ٥٩٠ھ
٭وفات شیخ حسن بن منصور قاضی خاں صاحب فتاویٰ۔۔۔۔۔۔٥٩٢ھ
٭وصال مقدس قطب العالم حضرت خواجہ قطب الدین بختیار کاکی قدس سرہ، (دہلی)۔۔۔۔۔۔٦٣٢ھ
٭دہلی میں ملکہ رضیہ سلطانہ کی حکومت ۔۔۔۔۔۔ ٦٣٤ھ
٭وفات علاؤالدین صابر کلیری۔۔۔۔۔۔٦٩٠ھ
٭حکومت محمدشاہ تغلق ۔۔۔۔۔۔ ٧٢٥ھ
٭وفات مؤرخ اسلام ابو الفداء اسماعیل ۔۔۔۔۔۔٧٣٢ھ
٭وفات شاہ میر کشمیری (ہندو راجاؤں پر غلبہ حاصل کرکے کشمیر میں سب سے پہلی اسلامی سلطنت کی بنیاد رکھی)۔۔۔۔۔۔٧٥٠ھ
٭وفات فخر الزمان بدر چاچ معروف شاعر دربار سلطان محمد بن تغلق۔۔۔۔۔۔٧٥١ھ
٭وفات غیاث الدین علی شیر کشمیری۔۔۔۔۔۔٧٥٣ھ
٭وفات شیخ الاسلام امام تقی الدین السبکی قدس سرہ، (فقیہہ، مفسر، محدث۔۔آٹھویں صدی ہجری کے معاون مجدد) ۔۔۔۔۔۔ ٧٥٦ھ
٭وفات حسن گنگوبہنی۔۔۔۔۔۔٧٥٩ھ
٭خلافت ذکریا المعتصم(دومرتبہ اقتدار کا موقع ملا، یہ اوّل موقع تھا ) ۔۔۔۔۔۔ ٧٧٩ھ
٭وفات علی بن ایبک الشاعر۔۔۔۔۔۔٨٠١ھ
٭وفات ابراہیم السرائی الشافعی ۔۔۔۔۔۔ ٨٠٢ھ
٭وفات الملک الاشرف اسماعیل۔۔۔۔۔۔٨٠٣ھ
٭محدث /فقہیہ شافعی عمر بن علی بن الملغن۔۔۔۔۔۔٨٠٤ھ/١٣٠٢ئ
٭وفات جمال الدین الحریری۔۔۔۔۔۔٨٠٧ھ
٭وفات سیف الدین السیرانی۔۔۔۔۔۔٨١٠ھ
٭ وفات جلال الدین بن خطیب داریا۔۔۔۔۔۔٨١٠ھ
٭حکومت و اقتدار دولت خاں لودھی ۔۔۔۔۔۔٨١٤ھ
٭وفات ابو الخیر شمس الدین بن محمد ابن الجزری (امام فن تجوید و قرأت السبعہ) ۔۔۔۔۔۔٨٣٣ھ
٭خلافت ابو ربیعہ سلیمان المشکفی الثانی۔۔۔۔۔۔٨٤٥ھ
٭تخت نشینی بایزید ثانی(سلطنتِ عثمانیہ)۔۔۔۔۔۔٨٨٦ھ
٭وفات سنان الدین یوسف الحنفی ۔۔۔۔۔۔٨٩١ھ
٭وفات زین الدین خالد النحوی۔۔۔۔۔۔٩٠٥ھ/١٤٩٩ء
٭وفات ابو المعالی سبط الشہاب العمیری۔۔۔۔۔۔٩٠٦ھ
٭وفات شاہ علی گجراتی۔۔۔۔۔۔٩١٣ھ
٭وفات قوام قاضی بغداد ۔۔۔۔۔۔ ٩١٧ھ
٭تخت نشینی سلیم اول پہلا عثمانی خلیفہ۔۔۔۔۔۔٩١٨ھ /١٥١٢ئ
٭وفات قاضی جگن (خزانۃ الفتاویٰ)۔۔۔۔۔۔٩٢٠ھ
٭وفات بدرالدین الحصکفی۔۔۔۔۔۔٩٢٥ھ
٭وفات شاہ قاسم ملازدہ۔۔۔۔۔۔٩٣٨ھ
٭وفات شمس الدین ابن کمال پاشا۔۔۔۔۔۔٩٤٠ھ
٭وفات یوسف الکالی ۔۔۔۔۔۔ ٩٤٥ھ
٭وفات شیر شاہ سوری۔۔۔۔۔۔٩٥٢ھ/١٥٤٥ء
٭حکومت اسلام شاہ سوری۔۔۔۔۔۔٩٥٢ھ/ ١٥٤٥ء
٭تعمیرنو مسجد حرام مکۃ المکرمہ ۔۔۔۔۔۔٩٦٠ھ
٭وفات مصلح الدین سروری۔۔۔۔۔۔٩٦٩ھ
٭وفات تاج لادین الحمیدی۔۔۔۔۔۔ ٩٧٣ھ
٭خلافت سلیم ثانی سلطنت عثمانیہ۔۔۔۔۔۔٩٧٤ھ
٭وفات شیخ علی متقی الہندی قدس سرہ،، مؤلف'' کنزالعمال شریف''۔۔۔۔۔۔٩٧٥ھ
٭وفات محمد پاشا الوزیر ۔۔۔۔۔۔٩٨٧ھ
٭وفات جمال الدین الاسخر الیمنی۔۔۔۔۔۔٩٩١ھ
٭وفات جمال الدین الطاہر الاہدلی۔۔۔۔۔۔٩٩٨ھ
٭قتل شیخ ابو الفضل علامی۔۔۔۔۔۔١٠١٠ھ ٭خلافت عثمان ثانی۔۔۔۔۔۔١٠٢٧ھ
٭وصال شیخ المشائخ حضرت میاں میر لاہوری۔۔۔۔۔۔١٠٤٥ھ
٭وصال شیخ عبدالحق محدث دہلوی۔۔۔۔۔۔١٠٥٢ھ
٭شہادت قطب الدین سہالوی۔۔۔۔۔۔١١٠٣ھ
٭وفات زیب النساء دختر عالمگیر۔۔۔۔۔۔١١١٢ھ
٭وفات شاہ امین عظیم آبادی۔۔۔۔۔۔١١٢٧ھ
٭خلافت محمود اول۔۔۔۔۔۔١١٤٣ھ
٭خلافت مصطفی ثالث۔۔۔۔۔۔١١٧١ھ
٭وفات شاہ ولی اللہ محدث دہلوی۔۔۔۔۔۔١١٧٦ھ
٭وفات نجیب الدولہ۔۔۔۔۔۔١١٨٤ھ
٭وفات اشرف علی افغان (پٹنہ) ١١٨٦ھ
٭وفات آصف الدولہ(اودھ)۔۔۔۔۔۔١٢١٢ھ
٭والی مکہ شریف، غالب نے مکہ سے وہابیوں کو نکال دیا۔۔۔۔۔۔٢٢ ربیع الاول١٢١٨ھ
٭محمد علی پاشا نے عبداللہ بن سعود نجدی اور اس کے چند حواریوں کو قسطنطنیہ میں قتل کیا۔۔۔۔۔۔١٢٣٤ھ
٭وفات مومن دہلوی۔۔۔۔۔۔١٢٦٩ھ
٭شاہ احمد سعید مجددی کی مدینہ میں وفات۔۔۔۔۔۔٢ ربیع الاول ١٢٧٧ھ /١٨ ستمبر ١٨٦٠ء
٭وفات مفتی صدر الدین آزردہ (دہلی) ١٢٨٥ھ
٭وفات عبدالحئی فرنگی محل لکھنوی۔۔۔۔۔۔١٣٠٤ھ
٭وفات مولانا عنایت رسول چریا کوٹی ۔۔۔۔۔۔١٣٢٠ھ
٭فلسطین پر برطانوی قبضہ۔۔۔۔۔۔١٣٣٦ھ
٭خلافت عبدالمجید الثانی عثمانی ۔۔۔۔۔۔١٣٤٢ھ
٭وفات حکیم سید برکات احمد ٹونکی بہاری ۔۔۔۔۔۔١٣٤٧ھ
٭وفات قاضی سلیمان منصورپوری(مصنف رحمۃ للعالمین) ۔۔۔۔۔۔١٣٤٩ھ
٭وفات مظہر الحق (پٹنہ) ١٣٥٠ھ
٭وفات پروفیسر مولانا سید سلیمان اشرف بہاری (خلیفہ اعلیٰ حضرت علیہ الرحمۃ) ۔۔۔۔۔۔١٣٥٨ھ
٭آزادی لبنان۔۔۔۔۔۔١٣٦٥ھ
٭وفات (حامی نجدی حکومت) سلیمان ندوی ۔۔۔۔۔۔ ١٣٧٣ھ
٭آزادی جمہوریہ وسط افریقہ و نائجیریا۔۔۔۔۔۔١٣٨٠ھ

=================================================================================
خدا کی رضا چاہتے ہیں دو عالم
خدا چاہتا ہے رضائے محمد



قیصر مصطفٰی عطاری
http:www.razaemuhammad.co.cc
Back to top Go down
View user profile http://razaemuhammad.123.st
muhammad khurshid ali
Moderator
Moderator
avatar

Posts : 371
Join date : 05.12.2009
Age : 36
Location : Rawalpindi

PostSubject: Re: ماہِ ربیع الاوّل میں وقوع پذیر ہونے والے اہم تاریخی واقعات   Tue 16 Feb 2010 - 14:26


=================================================================================
Back to top Go down
View user profile
 
ماہِ ربیع الاوّل میں وقوع پذیر ہونے والے اہم تاریخی واقعات
Back to top 
Page 1 of 1

Permissions in this forum:You cannot reply to topics in this forum
Raza e Muhammad :: رضائے محمد ﷺ لائبریری :: اسلامی مہینے :: ربیع الاول و میلاد النبی-
Jump to:  
Free forum | © phpBB | Free forum support | Contact | Report an abuse | www.sosblogs.com